صفحہ اول » تجارت » کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹینٹ کا پیشہ اچھے مستقبل کی ضمانت

کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹینٹ کا پیشہ اچھے مستقبل کی ضمانت

تعارف
کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹنگ کی ضروریات پوری کرنے اور اس شعبے میں تربیت یافتہ افرادی قوت فراہم کرنے کے لیے انسٹی ٹیوٹ آف کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹینٹس پاکستان (آئی سی ایم اے پی) 1851ء میں قائم کیا گیا ہے۔ اپنے میدان میں یہ پاکستان کا واحد اور وسیع ادارہ ہے۔ اس کے مراکز کراچی، لاہور، اسلام آباد، پشاور، کوئٹہ، ایبٹ آباد فیصل آباد، حیدر آباد، ملتان، اور الخبر (سعودی عرب )میں قائم ہیں۔ ان مراکز پر براہ راست تدریس کے علاوہ خط و کتابت کے ذریعے بھی کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹنگ کی تعلیم دی جاتی ہے۔ الخبر کے مرکز کے ذریعے یہ سہولت سعودی عرب اور دوسرے خلیجی ممالک تک بھی پھیل چکی ہے۔
پاکستان کے مختلف ادارے مثلاً پی آئی اے، کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ، انویسٹمنٹ کارپوریشن آف پاکستان اور این ڈی ایف سی وغیرہ بھی انسٹی ٹیوٹ سے استفادہ کرتے ہیں اور اپنے افسران کو مختصر المیعاد اور نصاب کی تکمیل کے لیے وقتاً فوقتاً یہاں بھیجتے رہتے ہیں۔
انسٹی ٹیوٹ اس وقت پورے پاکستان میں مجموعی طور پر بیس ہزار طالب علموں کو رہنمائی فراہم کر رہا ہے۔ یہاں سے اب تک فارغ التحصیل ہونے والے طلبہ کی تعداد تقریباً بارہ سو ہے اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ ان میں سے کم و بیش تمام ہی افراد متعلقہ شعبوں میں بر سرِ روزگار ہیں، جو اس ادارے کی کامیابی کا منھ بولتا ثبوت ہے۔
داخلے کی شرائط
انسٹی ٹیوٹ میں داخلے کے لیے کم از کم گریجویٹ (بی اے، بی ایس سی، بی کام )یا مساوی درجے کی کوئی تعلیم ہونا یا اے لیول تک تعلیمی قابلیت ہونا پہلی شرط ہے۔ داخلے کی درخواست دینے والے افراد صرف اہلیت کی بنیاد پر منتخب کیے جاتے ہیں اور اہلیت کا تعین داخلہ امتحان کے ذریعے کیا جاتا ہے۔ یہ امتحان انگریزی، حساب، معلوماتِ عامہ اور ذہانت کے سوالات پر مشتمل ہوتا ہے۔ اس امتحان میں مطلوبہ نمبروں سے کامیاب ہونے والے تمام طالب علموں کو انسٹی ٹیوٹ میں داخلہ دے دیا جاتا ہے، اس سلسلے میں طلبہ کی تعداد کی کوئی حد مقرر نہیں کی گئی ہے نہ ہی طلبہ و طالبات کے درمیان کوئی امتیاز برتا جاتا ہے، یہ امتحان ہر چھ ماہ بعد سال میں دو مرتبہ منعقد ہوتا ہے۔ اس کی موجودہ تاریخیں جون اور دسمبر کے مہینوں میں ہیں البتہ ان میں کسی وجہ سے تبدیلی بھی ہوسکتی ہے۔
مطلوبہ رجحانات
یوں تو کسی بھی شعبے میں گریجویشن کرلینے والے طالب علم یہاں پر داخلے کا امتحان دے سکتے ہیں، تاہم ذاتی رجحانات کی اہمیت سے رو گردانی نہیں کی جاسکتی۔ اگر آپ آئی سی ایم اے میں داخلے کے خواہش مند ہیں تو انگریزی پر مناسب عبور کے علاوہ ریاضی میں مہارت بھی آپ کی بہت مدد کرے گی۔ اس کے علاوہ ہر کام کے چھوٹے بڑے پہلوؤں پر گہری نظر رکھنا اور منظم انداز میں اپنا کام سرانجام دینا، ایسی اضافی خصوصیات ہیں جن کی یہاں پر زیادہ ضرورت پڑتی ہے۔
تدریسی سہولتیں اور نصاب
انسٹی ٹیوٹ آف کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹینٹس کا نصاب ڈھائی سے تین سال پر محیط ہے، البتہ نصاب کی بروقت یا بعد از وقت تکمیل کا انحصار طالب علموں کی ذاتی صلاحیتوں اور دلچسپی پر ہوتا ہے۔ انسٹی ٹیوٹ میں یہ سہولت بھی رکھی گئی ہے کہ طالب علم اپنا نصاب اضافی وقت میں بھی مکمل کرلیں۔ لہٰذا عام طور پر ملازمت کرنے والے وہ افراد جو مزید تعلیم کے خواہش مند ہیں یہاں ،داخلہ لے کر جستہ جستہ اپنی قابلیت میں اضافہ کرتے ہیں اور کل وقتی ملازمت بھی جاری رکھتے ہیں۔
تدریس کا عمل ایک سے دو شفٹوں میں جاری رہتا ہے۔ کراچی اور لاہور جیسے گنجان آباد شہروں میں انسٹی ٹیوٹ کے طالب علموں کی تعداد بھی بہت زیادہ ہے چناں چہ ان دو شہروں کے مراکز صبح نو بجے سے رات نوبجے تک کھلے رہتے ہیں، تعلیم کی غرض سے یہاں پر جدید ترین صوتی بصری اور کمپیوٹرائزڈ طریقے اختیار کیے جاتے ہیں، خط و کتابت کے ذریعے بھی درسی مواد کی ترسیل، وصولیابی اور جانچ پڑتال جاری رہتی ہے۔
یہاں پر سمسٹر سسٹم رائج ہے، ہر سال میں دو سمسٹر ہوتے ہیں جن کی مدت چھ ماہ ہوتی ہے، سمسٹر کے دوران ہفتہ وار اور ماہانہ ٹیسٹ اور اسائن منٹس کے ذریعے طالب علموں کی صلاحیتیں آزمائی جاتی ہیں۔
چھ سمسٹرز میں کامیابی حاصل کرنے کے بعد انسٹی ٹیوٹ کامیاب طالب علم کو ’’کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹینٹ‘‘ کی سند جاری کر دیتا ہے۔
اسی مستعد نظام تعلیم کی وجہ سے یہاں کے طلبہ و طالبات سارا سال پڑھائی میں مصروف رہتے ہیں۔ ان کی تعلیمی ضروریات کے پیشِ نظر ہر مرکز میں ایک موزوں لائبریری موجود ہے جہاں پر نصاب کے حوالے سے جدید ترین کتب اور دیگر مطبوعات مطالعے کے لیے فراہم کی جاتی ہیں۔ یہ لائبریریاں، انسٹی ٹیوٹ کے باقاعدہ طالب علموں کو بازار سے مہنگی کتب خریدنے اور زیر بار ہونے سے بھی بچاتی ہیں۔
یہاں کے نصاب میں نئے متعارف کروائے گئے ’’فاؤنڈیشن کورس‘‘ کے علاوہ کاسٹ اینڈ مینجمنٹ کا احاطہ کرنے والے یہ مضامین شامل ہیں۔ معاشیات، صنعتی و تجارتی قوانین، بزنس کمیونی کیشن ، رپورٹ رائٹنگ ، بزنس، میتھ میٹکس ، شماریات، پروڈکشن، ٹیکنالوجی، مینجمنٹ، ٹیکسیشن، ایم آئی ایس، ڈیٹاپروسیسنگ، معیاریاتی فنیات، کارپوریٹ لا اینڈ سیکریٹریل پریکٹس، آڈیٹنگ ، فنانشل، مینجمنٹ آرگنائزیشن اور مارکیٹنگ، مینجمنٹ
کاسٹ اکاؤنٹنگ، مینجمنٹ اکاؤنٹنگ ایڈوانس ، اکاؤنٹنگ۔

یہ بھی دیکھیں

بینکاری ایک دلچسپ، ہمہ جہت اور نہایت سرگرم شعبہ ہے

بینکاری یا بینکنگ ایک دلچسپ، ہمہ جہت اور نہایت سرگرم شعبہ ہے، جو مالیاتی امور …