صفحہ اول » فضائی فوج

فضائی فوج

zindagi-kay-rastayفضائیہ،ملک کے دفاعی نظام کا اہم ترین شعبہ ہے ۔
جدید دور میں دفاعی سائنس میں جس تیزی سے پیش رفت ہورہی ہے اس کی وجہ سے ملک کے دفاع میں فضائیہ کی اہمیت روزبہ روزبڑھتی جارہی ہے۔ فضائیہ کا کام ملک کی فضائی حدود اور سرحدوں کی حفاظت کرنا، دشمن کے فضائی حملوں کو روکنا اور فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے والے طیاروں کو گرفتار کرنا یا مار گرانا ہے۔ جنگ کے دوران فضائیہ اپنی بری فوج کو فضائی حملے سے تحفظ فراہم کرتی ہے، دشمن کی فوجوں کو تباہ کرتی ہے اوردفاعی اہمیت کی مخالف تنصیبات کو نشانہ بناتی ہے ۔
پاک فضائیہ (پاکستان ایئر فورس) کے شاہین صفت افسر اور جوان طیاروں کو اڑانے اور میزائلوں کے نظام کی موءثر کارکردگی کا بنیادی فرض ادا کرتے ہیں۔ دیگر ذمہ داریوں میں انتظامی، طبی اور فراہمی و ترسیل کی ذمہ داریاں شامل ہیں جو فضائیہ کی موءثر کارکردگی کو جاری رکھنے، افراد کی تربیت اورفضائیہ کی تنصیبات کی کارکردگی سے متعلق ہوتی ہیں

پاک فضائیہ کی تنظیم

پاکستان ایئرفورس کا ہیڈ کوارٹر چکلالہ ( راول پنڈی) میں ہے۔ چیف آف ایئر اسٹاف فضائیہ کا سب سے بڑا عہدہ ہے۔ پی اے ایف ہیڈ کوارٹر کے تحت تین علاقائی ایئر کمانڈ پشاور، سرگودھا اور کراچی میں قائم ہیں جو پورے ملک کی فضائی حدود کی نگرانی اورتحفّظ کا کام انجام دیتی ہیں۔ ہر علاقائی ایئر کمانڈ کا سربراہ ایئر آفیسر کمانڈنگ کہلاتا ہے ۔

کام کی نوعیت

فضائیہ کے افسروں کابنیادی کام ایئرفورس کے مختلف شعبوں کو موءثر رکھنا ہے۔ افسراپنے عہدے کے اعتبار سے انتظامی ذمہ داریاں ادا کرتے ہیں۔ بعض افسروں کو ایک خاص شعبے میں مہارت کی تربیت دی جاتی ہے ۔جنرل ڈیوٹی (فلائنگ) برانچ کے افسروں کو طیارہ اڑانے کی تربیت دی جاتی ہے۔ یہ افسر طیاروں کی پرواز اور فضائی آپریشن کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ نیوی گیٹر طیاروں کے ہتھیاروں کے نظام کا نگراں ہوتا ہے اور ہوا باز (پائلٹ) کے ساتھ قریبی رابطہ رکھتے ہوئے اپنا کام انجام دیتا ہے (مثلاً میزائل کو درست نشانے پر پھینکنا) ۔
گراﺅنڈ برانچ کے افسروں میں ایئر ٹریفک کنٹرولر شامل ہوتے ہیں جو ہر قسم کے موسمی حالات میں طیاروں کی بہ حفاظت اڑان، ان کی رہنمائی اور ان کے اترنے کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔ یہ افسر ہدایات، فضائی پروازکی اطلاعات اور ہوا بازوں کی رہبری کے لیے ہدایات نشر کرتے ہیں، وقت ضرورت طیاروں کو متبادل ایئرپورٹ یا ایئر اسٹرپ پر اترنے کی ہدایت کرتے ہیں۔ ہنگامی حالات میںامدادی سرگرمیوں اور گم شدہ طیارے کی تلاش کے ابتدائی کام کا آغاز کرتے ہیں۔
فائٹر کنٹرولر طیاروں کی پرواز اور نقل و حرکت کی نگرانی کرتے ہیں اور ان کی شناخت کرتے ہیں ۔ اس شعبے کے افسر فضائی جنگ اورفضائی جنگی مشقوں کی نگرانی کرتے ہیں۔ فضا میںموجود طیاروں کے ہوا بازوں کو مخالف طیاروں کی نقل و حرکت اورممکنہ کارروائی سے باخبر کرتے ہیں ان کو جوابی کارروائی کی ہدایت دیتے ہیں۔
سسٹم آفیسر ، فضائی دفاع کے دیگر متعلقہ فرائض سرانجام دیتے ہیں ۔
فوٹو گرافک انٹر پریٹر ، جاسوس طیاروں کے ذریعے فراہم ہونے والی اطلاعات کا تجزیہ کرتے ہیں ۔ انجینئرنگ برانچ کے افسر طیاروں اور متعلقہ آلات کے فنی پہلوﺅں کی نگرانی اور دیکھ بھال کرتے ہیں ۔اس شعبے کے افسر دو میں سے کسی ایک شاخ میں مہارت رکھتے ہیں۔
-1 ایرو سسٹم : ایروسسٹم سے متعلق افسر طیاروں کے فنی معاملات اوران پر موجود ہتھیاروں کی موءثر کارکردگی کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔
-2 کمیونیکیشن الیکٹرونکس : اس شعبے سے متعلق افسر طیاروں اور زمینی تنصیبات کے مواصلاتی نظام اور آلات کی موءثر کارکردگی، زمین سے ہوا میں پیغام کی ترسیل کے نظام، ہوائی اڈوں کے نشریاتی نظام (ریڈیو کمیونیکیشن) اور زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائلوں کی دیکھ بھال کے ذمہ دار ہوتے ہیں ۔
سپلائی برانچ کے افسر ، ضروری اشیا ، ہتھیاروں اورآلات کی فراہمی اور ترسیل کے ذمہ دار ہوتے ہیں انتظامی برانچ کے افسر معاون خدمات فراہم کرتے ہیں جن میں حسابات، تعلیم، تربیت، غذائی اور جسمانی تربیت شامل ہے ۔
سیکوریٹی برانچ میں ایئر فورس پولیس اور ایئر فورس سیکوریٹی کے افسر شامل ہوتے ہیں ۔
ایک رجمنٹ کے افسروں میں فضائی لڑائی کی قیادت کرنے والے، پیراشوٹ اسکواڈرن، زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل چلانے والے، اور فضائیہ کے طیاروں اور تنصیبات کی حفاظت کرنے والے شامل ہوتے ہیں ۔