صفحہ اول » بلاگ » آرکی ٹیکچر- سائنس اور ٹیکنالوجی کے جدید ترین تقاضوں سے واقف ہوتا ہے

آرکی ٹیکچر- سائنس اور ٹیکنالوجی کے جدید ترین تقاضوں سے واقف ہوتا ہے

اگر کسی مضمون کو فنونِ لطیفہ اور سائنس کا سنگم کہا جاسکتا ہے تو وہ بلاشبہ فنِتعمیر (آرکی ٹیکچر) ہے۔ ایک عمار (آرکیٹیکٹ) نہ صرف یہ کہ ایک اچھے جمالیاتی ذوق کا مالک ہوتا ہے بلکہ وہ سائنس اور ٹیکنالوجی کے جدید ترین تقاضوں سے بھی واقف ہوتا ہے۔ وہ افراد کے رہنے اور بسنے کے لیے مکانات اور فلیٹ، طالب علموں کے لیے اسکول، کالج اور جامعات

صنعت کاروں کے لیے فیکٹریاں، تاجروں کے لیے شاپنگ کمپلیکس اور بازار، کاروبارِ حکومت کے لیے دفاتر اور مذہبی امور کی انجام دہی کے لیے مساجد اور گرجا گھر ڈیزائن کرتا ہے۔ وہ فنِ تعمیر اور فنونِ لطیفہ کی تاریخ کی آگہی اور بلڈنگ ٹیکنالوجی کے جدید علم کی مدد سے اپنی ڈیزائننگ کو اس طرح پایہ ءتکمیل تک پہنچاتا ہے کہ عمارت کی تعمیر کا بنیادی مقصد پورا ہوجائے، عمارت پائیدار اور مستحکم بنیادوں پر استوار ہو اور عمارت استعمال کرنے والوں کے جمالیاتی ذوق کی تسکین بھی ہوجائے۔

اب سے کوئی دو ہزار برس پہلے قدیم روم کے ایک مشہور عماروٹر وویس نے ایک عمار کے تین بنیادی ہدف، عمارت کا درست استعمال، مضبوطی اور خوب صورتی کو قرار دیا تھا۔ آج بھی ایک عمار کا بنیادی ہدف یہی تین باتیں ہوتی ہیں۔
چوںکہ عمار کسی عمارت کے تصوّر کا خالق ہوتا ہے اس لیے اس کی موجودگی عمارت کی تعمیر کے ہر مرحلے پر ضروری ہوتی ہے۔ عمار کا پیشہ اپنی نوعیت کے لحاظ سے انجینئرنگ کے دوسرے پیشوں سے مختلف ہے۔ ایک سول انجینئر کا کام دیے ہوئے نقشے کے مطابق عمارت تعمیر کرنا ہے۔ اسی طرح الیکٹریکل انجینئر حسبِ ضرورت بجلی کے کسی نظام کو مکمل کر دے گا یا اس کی خرابی دور کرے گا ، یا کسی بجلی گھر میں مشینوں اور آلات کی نگرانی اور بجلی کی ترسیل کے نظام کی دیکھ بھال کرے گا لیکن ایک عمار نہ صرف ایک عمارت کے خاکے کو سوچتا ہے بلکہ اپنے تصور کو کاغذ پر منتقل کرتا ہے اور عملی طور پر ایک ٹھوس عمارت کی شکل دیتا ہے۔ بعض اوقات اس کی تزئین و آرائش بھی اپنے تصور کے مطابق کراتا ہے۔ اس طرح یہ پیشہ ان نوجوانوں کے لیے موزوں ہے جو جمالیاتی ذوق کے ساتھ ریاضی اور انجینئرنگ میں دلچسپی رکھتے ہیں اور ایسے پیشے اپنانا چاہتے ہیں جس میں ان کے لیے چیلنج ہو۔

یہ بھی دیکھیں

کیریر پلاننگ کے اہم نکات

اپنا جائزہ لیں اور خود کو جانیں اپنے اندر کی شخصیت کا جائزہ لیجیے۔ اپنے …