صفحہ اول » انجینرنگ سے متعلق پیشے » برقیاتی انجینئرنگ

برقیاتی انجینئرنگ

پاکستان میں برقیات کی تعلیم بیچلرز (بی ای) اور ماسٹرز (ایم ای)ڈگری کی سطح تک ان اداروں میں دی جاتی ہے:
1۔داﺅد کالج آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، کراچی
2۔مہران یونی ورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، جام شورو
3۔یونی ورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی،لاہور
4۔انسٹی ٹیوٹ آف انڈسٹریل الیکٹرونکس انجینئرنگ، کراچی

نصابِ تعلیم

بی ای برقیات کا نصاب چار سال پر مشتمل ہے جس کی تفصیل یہ ہے۔ پہلے سال میں طلبہ کو ریاضیات، انجینئرنگ گرافکس، طبیعیات ، الیکٹرو میکینکس، نیٹ ورک انا لیسس، بنیادی الیکٹرونکس، الیکٹرونکس کمپوننٹس، انگریزی اور ورک شاپ پریکٹس کے کورسز کرنے ہوتے ہیں۔ دوسرے سال میں ریاضیات، برقیاتی آلات، انسٹرو مینٹیشن، فیڈ بیک اینڈ کنٹرول، ایمپلی فائر اور آکسی لیٹرز، ڈیجیٹل الیکٹرونکس، کمپیوٹر پروگرامنگ، اسلامیات اور مطالعہء پاکستان، الیکٹریکل مشینیں، تیسرے سال میں شماریات، مائیکرو پروسیسرز، ایڈوانس الیکٹرونکس، انڈسٹریل ایڈمنسٹریشن اور پروڈکشن انجینئرنگ، ماڈرن الیکٹرونک آلات، نی ومیریکل انالیسر، کمپیوٹر پروگرامنگ، ریڈی ایٹنگ سسٹم، فیڈ بیک اینڈ کنٹرول اور چوتھے سال میں کمیونی کیشن سسٹم، ایکٹو سرکٹ انالیسر اور ٹیلی کمیونی کیشن، کمپیوٹر پروگرامنگ، برقیاتی ڈیزائن،نی وی کیشنل ایڈز،انڈسٹریل الیکٹرونکس، سگنل پروسیسنگ شامل ہیں۔ طلبہ کو سال آخر میں 200
نمبروں کا ایک پروجیکٹ بھی مکمل کرنا ہوتا ہے۔
نصاب کی جو تفصیل اوپر بیان کی گئی ہے وہ داﺅد کالج کے بی ای پروگرام سے تعلق رکھتی ہے جب کہ مہران یونی ورسٹی میں مندرجہ بالا مضامین کے علاوہ بھی چند مضامین الیکٹرونکس کے طلبہ کو پڑھنے ہوتے ہیں، ان میں تھرموڈائنامکس اور اسٹرنتھ آف میٹریلز، سال دوم میں، سگنل انالیسر سال سوم میں اور مائیکرو ویو انجینئرنگ، آپٹیکل کمیونی کیشن، رینڈم سگنل نوائز اور اسپیکٹرل انالیسر سال چہارم میں شامل ہیں۔
مندرجہ بالا کورسز کے علاوہ پی سی ایس آئی آر کے پاک سوئس ٹریننگ سینٹر میں ایک چار سالہ کورس ”انڈسٹریل الیکٹرونکس“ شروع کیا گیا ہے۔ 1989ءمیں پہلے بیج میں 38طلبہ کو داخلہ دیا گیا تھا۔ اس چار سالہ ڈگری کورس کو این ای ڈی انجینئرنگ یونی ورسٹی سے منظور کرانے کے لیے خاصی پیش رفت ہوئی ہے اور امید ہے کہ اس ادارے کا این ای ڈی سے الحاق ہوجائے گا تو اس کی سند بے حد اہمیت اختیار کرجائے گی۔

ڈپلوما کورس

میٹرک سائنس (پری انجینئرنگ + انڈسٹریل آرٹس) کامیاب امیدوار، کالج آف ٹیکنالوجی یا پولی ٹیکنک انسٹی ٹیوٹ میں برقیات کے تین سالہ ڈپلوما کورس میں داخلہ لے سکتے ہیں۔ یہاں انٹرمیڈیٹ (پری انجینئرنگ) کامیاب امیدواروں کے لیے بھی نشستیں ہوتی ہیں۔ تین سالہ کورس کامیابی سے مکمل کرنے پر ڈپلوما آف ایسوسی ایٹ انجینئرکی سند دی جاتی ہے۔ اس سند کے حامل امیدوار اگر چاہیں تو آگے بی ٹیک (بیچلر آف ٹیکنالوجی) کے امتحان میں شریک ہوسکتے ہیں۔
الیکٹرونکس ٹیکنالوجی میں ڈپلوما کامیاب امیدواروں کی صنعتی شعبے میں خاصی مانگ ہے  اور پاکستان میں صنعتی ترقی کے روشن امکانات کے ساتھ ان کی طلب میں اضافے کے مواقع پائے جاتے ہیں۔
بی ای اور ڈپلوما کے علاوہ الیکٹرونکس میں سرٹیفکیٹ کورس بھی مکمل کیے جاسکتے ہیں۔ سرکاری شعبےمیں پورے ملک میں ٹیکنیکل ٹریننگ سینٹرز اور نجی شعبے میں اسی نوعیت کے منظور شدہ ادارے ایک سال اور ڈیڑھ سال کے تربیتی کورس کراتے ہیں۔ جن کی تکمیل پر برقیاتی آلات کی مرمت اور دیگر متعلقہ شعبوں میں ملازمت بھی مل سکتی ہے اور اپنا کام بھی کیا جاسکتا ہے۔